pehle jesa

pehle jesa kch bhe na raha

na tm, na main, aur na ye wkt,

sb ek adhura khoob sa rah gaya

sub ek andhere chaon sa rah gaya

pehle jesa khc bhe na raha,

na tm, na main aur na ye wkt,

na ye rat ke chandani wase hai,

na ye suraj ke roshni.

pehle jaisa kch bhe na raha,

na tm, na main aur na ye wakt

khamoshi ke zuban rahe,

aunson main ankhen rahe.

pehle jaisa kch bhe na raha,

na tm, na main aur na ye wkt,

bht smjhaya khd ko,

bht manaya khd ko.

 pehle jaisa kch bhe na raha,

na tm, na main aur na ye wkt ,

pus pehle jaisa kch bhe na raha

Rubbles and Casualties

Rubbles and casualties,

sorry and apologies

Dreadful mistakes

evacuation and protest

will never gonna end

fear, anger and hatred,

grief, misery and sorrows

thoughtfulness,

catastrophes,intentions,

will always going to hurt.

ME

Tired of being called careless every time

I’m here in this life to be valued.

Accept me as i m, Don’t change me please.

I too won’t demand any changes in u.

Broken, hurt, afraid and lost,

I dunt need more words to define what is true;

Love me or hate me but please dunt leave me ;

I’ll n always forever will admire u.

I don’t want things to get messed up,

nor i want them to be same as they are.

It’s difficult to cross all the hurdles;

n so i dunt want to be considered wrong again

Please accept me as I’m don’t change me please………….

ghazal

sar bazam rat pe kiya huamujhe gahm hai ye k bura hua

mere raz par mas e hal par mere chashm e nam tapak gaye

mujhe zabt e gahm ye goror tha mere ansun ne wafa na ke

mujhe ap q na smjh sake khd apne dil se puchye

meri dastan e hayat ka to wark wark hai khula hua

mujhe ek gali main para hua ek bad naseeb ka kaht mila

kahin khoon se likha hua, kahin ansun se mita hua

meri zindagi k chirag ka ya mizaj koi naya nhe

kbhe roshni main jala hua aur kbhe bhuja hua

mujhe hum safar mila koia to sitam zarif meri tarah

kaye manzilun ka thaka hua, kaye raston ka kata hua

mujhe jo bhe dushman jan o mal, wohe khafa kar mila

na kisi ki chot galat pari na kisi ka teer khata hua

Untitled….. because i dunt think this post needs a name

Please read the whole poem, you will find yourself somewhere in every line.

بوڑھے ماں باپ کے حقوق کوئی قسمت والا ہی ادا کر سکتا ہے۔اکثر اوقات اولاد اپنی غفلت اور نادانی سے اس سعادت سے محروم رہ جاتی ہے.

اسی غفلت سے بچنے کی طرف توجہ دلانے کے لئے یہ نظم  لکھی گئی ہے۔اللہ تعالیٰ ہم سب کو والدین کے حقوق اور اپنے فرائض سمجھنے کی

توفیق دے آمین۔
————————————————————————-

میرے بچو،گر تم مجھ کو بڑھاپے کے حال میں دیکھو
اُکھڑی اُکھڑی چال میں دیکھو
مشکل ماہ و سال میں دیکھو
صبر کا دامن تھامے رکھنا
کڑوا ہے یہ گھونٹ پہ چکھنا
’’اُف ‘‘ نہ کہنا،غصے کا اظہار نہ کرنا
میرے دل پر وار نہ کرنا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاتھ مرے گر کمزوری سے کا نپ اٹھیں
اور کھانا،مجھ پر گر جائے تو
مجھ کو نفرت سے مت تکنا،لہجے کو بیزار نہ کرنا

بھول نہ جانا ان ہاتھوں سے تم نے کھانا کھانا سیکھا
جب تم کھانا میرے کپڑوں اور ہاتھوں پر مل دیتے تھے
میں تمہارا بوسہ لے کر ہنس دیتی تھی
کپڑوں کی تبدیلی میں گر دیر لگا دوں یا تھک جاؤں
مجھ کو سُست اور کاہل کہہ کر ، اور مجھے بیمار نہ کرنا
بھول نہ جانا کتنے شوق سے تم کو رنگ برنگے کپڑے پہناتی تھی
اک اک دن میں دس دس بار بدلواتی تھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے یہ کمزور قدم گر جلدی جلدی اُٹھ نہ پائیں
میرا ہاتھ پکڑ لینا تم ،تیز اپنی رفتار نہ کرنا
بھول نہ جانا،میری انگلی تھام کے تم نے پاؤں پاؤں چلنا سیکھا
میری باہوں کے حلقے میں گرنا اور سنبھلنا سیکھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب میں باتیں کرتے کرتے،رُک جاؤں ،خود کو دھراوں
ٹوٹا ربط پکڑ نہ پاؤں،یادِ ماضی میں کھو جاؤں
آسانی سے سمجھ نہ پاؤں،مجھ کو نرمی سے سمجھانا
مجھ سے مت بے کار اُلجھنا،مجھے سمجھنا
اکتاکر، گھبراکر مجھ کو ڈانٹ نہ دینا
دل کے کانچ کو پتھر مار کے کرچی کرچی بانٹ نہ دینا
بھول نہ جانا جب تم ننھے منے سے تھے
ایک کہانی سو سو بار سنا کرتے تھے
اور میں کتنی چاہت سے ہر بار سنا یاکرتی تھی
جو کچھ دھرانے کو کہتے،میں دھرایا کرتی تھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


اگر نہانے میں مجھ سے سُستی ہو جائے
مجھ کو شرمندہ مت کرنا،یہ نہ کہنا آپ سے کتنی بُو آتی ہے
بھول نہ جانا جب تم ننھے منے سے تھے اور نہانے سے چڑتے تھے
تم کو نہلانے کی خاطر
چڑیا گھر لے جانے میں تم سے وعدہ کرتی تھی
کیسے کیسے حیلوں سے تم کو آمادہ کرتی تھی

۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گر میں جلدی سمجھ نہ پاؤں،وقت سے کچھ پیچھے رہ جاؤں
مجھ پر حیرت سے مت ہنسنا،اور کوئی فقرہ نہ کسنا
مجھ کو کچھ مہلت دے دینا شائد میں کچھ سیکھ سکوں
بھول نہ جانا
میں نے برسوں محنت کر کے تم کو کیا کیا سکھلایا تھا
کھانا پینا،چلنا پھرنا،ملنا جلنا،لکھنا پڑھنا
اور آنکھوں میں آنکھیں ڈال کے اس دنیا کی ،آگے بڑھنا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری کھانسی سُن کر گر تم سوتے سوتے جاگ اٹھوتو
مجھ کو تم جھڑکی نہ دینا
یہ نہ کہنا،جانے دن بھر کیا کیا کھاتی رہتی ہیں
اور راتوں کو کُھوں کھوں کر کے شور مچاتی رہتی ہیں
بھول نہ جانامیں نے کتنی لمبی راتیں
تم کو اپنی گود میں لے کر ٹہل ٹہل کر کاٹی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گر میں کھانا نہ کھاؤں تو تم مجھ کو مجبور نہ کرنا

جس شے کو جی چاہے میرا اس کو مجھ سے دور نہ کرنا
پرہیزوں کی آڑ میں ہر پل میرا دل رنجور نہ کرنا
کس کا فرض ہے مجھ کو رکھنا
اس بارے میں اک دوجے سے بحث نہ کرنا
آپس میں بے کار نہ لڑنا
جس کو کچھ مجبوری ہو اس بھائی پر الزام نہ دھرنا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گر میں اک دن کہہ دوں عرشی
ؔ ، اب جینے کی چاہ نہیں ہے
یونہی بوجھ بنی بیٹھی ہوں ،کوئی بھی ہمراہ نہیں ہے
تم مجھ پر ناراض نہ ہونا
جیون کا یہ راز سمجھنا
برسوں جیتے جیتے آخر ایسے دن بھی آ جاتے ہیں
جب جیون کی روح تو رخصت ہو جاتی ہے
سانس کی ڈوری رہ جاتی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شائد کل تم جان سکو گے ،اس ماں کو پہچان سکو گے
گر چہ جیون کی اس دوڑ میں ،میں نے سب کچھ ہار دیا ہے
لیکن ،میرے دامن میں جو کچھ تھا تم پر وار دیا ہے
تم کو سچا پیار دیا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جب میں مر جاؤں تو مجھ کو
میرے پیارے رب کی جانب چپکے سے سرکا دینا
ا ور ،دعا کی خاطر ہاتھ اُٹھا دینا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


میرے پیارے رب سے کہنا،رحم ہماری ماں پر کر دے
جیسے اس نے بچپن میں ہم کمزوروں پر رحم کیا تھا
بھول نہ جانا،میرے بچو

جب تک مجھ میں جان تھی باقی

خون رگوں میں دوڑ رہا تھ
ا
دل سینے میں دھڑک رہا تھ
ا
خیر تمہاری مانگی میں نے



Uljhanen

Ek chote se baat ka bhe afsana bana

ek chote se bt ka bhe tamasha bana

ye zindagi ke hain uljhanen

jo har apna paraya bana

 

ek rat the the andhere ae ghire hue

ek rat the khamoshe se bhair hue

ye zindagi ke hain uljhanen

jo har galte ek  saza hue

 

koi khafa hua hum se kuch is tarah

koi naraz hua hum se kuch is tarah

ye zndagi ke hain uljhanen

jo har bar hum phr manate rahe

 

kch khamoshi ke dastan hue

kch chahton k khuwab likhe

ye zindagi ke hain uljhanen

jo har kahani apna ekhtatm par phunche

 

kch Qasmain tore gayen

kch wade tore gaye

ye zinadgi ke hain uljhanen

jo wo wade kbhe intezar main toot kar na bane

 

kch sanhe ankhun ko naam kar gaye

kch waqye dil ko gham kar gaye

ye zindagi ke hain uljhanen

jo har pal muskarate rahe

 

kch khuwab bikhre hue

kch khuwab tute hue

ye zindagi ke hain uljhanen

jo har rat hum jag kar sogaye

 

jo kbhe na khul kar ro sake

jo kbhe na khul kar hans sake

ye zindagi ke hain uljhanne

jo har khushi manate rahe

 

ye zindagi ek naimait hai

aur mout barhaq hai

ye zindagi ke hain uljhanen

ye zindage ke hain uljhanen

 

n here is the english version

A little part of chat resulted in a fiction

A little part of chat resulted in a spectacle

they are life’s intricacies

that every relation started becoming into stange

 

A night surrounded by intense darkness

A night surrounded by intense silence

they are life’s intricacies

that every mistake become a punishment

 

some one got displeased that way

some one got angry that way

they are life’s intricacies

n so still pleasing by any means

 

certain stories of intense silence

certain delusions of being beloved

they are life’s intricacies

that every tale reached its conclusions

 

some oaths were broken

some promises were broken

they are life’s intricacies

those promises were never formed anyways

 

some incidents left tears in eyes

some events left miseries in heart

they are life’s intricacies

still remains a smiling face

 

some dreams ere shattered

some dreams were lost

they are life’s intricacies

instead slept every night

 

Rarely was able to smile freely

rarely was able to cry freely

they are life’s intricacies

still bewildering celebrating every occacsion

 

this life is a blessing

and death is a definite ending

they are life’s intricacies

THEY  ARE LIFE’S INTRICACIES


to a better note lets hear this song n another song 🙂

n the amazing thing is that it should be anum instead of aisha in this song 😛 😀 🙂